Aye Hur Jawan Ka Lasha

جس گھڑی ہُر کا پیسر زین سے مقتل میں گرا

لاش پر اسکی گئے ہُر سے بھی پہلی مولا

لاش بیٹی کی اٹھانے ہُر جو اٹھا

ہُر کو سینے سے لگا کے شاہ والا نے کہا

آئے ہُر آئے ہُر آئے ہُر

اے حر ع جوان کا لاشہ اٹھانا مشکل ہے

پسر کے سینے سے برچھی چھڑانا مشکل ہے

دلِ پدر کی جو حالت ہے حر ع سمجھتا ہوں

تمھارے صبر کی لیکن میں داد دیتا ہوں

کہ جیسے تم یہاں آئے ہو آنا مشکل ہے

جو حال ہونا ہے قاسم ع کا اس کا حال نہ ہو

کہ تیرے لال کی میت تو پائمال نہ ہو

میں جانتا ہوں کہ ٹکڑے اٹھانا مشکل ہے

حسین ع کہتے تھے رو کر یہ حر کے بیٹے سے

سمجھ رہا ہوں اذیت تری مرے بچے

بریدہ حلق سے یوں مسکرانا مشکل ہے

پکارا حر ع کا پسر رو کے اے شہِ عصمت

سلام کے لیے اٹھنے کی بھی نہیں ہمت

کہ پیاسے ہونٹوں سے مولا ع بلانا مشکل ہے

غریب باپ کا یہ امتحاں نہیں لوں گا

تمھارے لال کو کاندھوں پہ میں اٹھاؤں گا

اٹھا کے لاش کو خیموں میں جانا مشکل ہے

یہ وقت کیسا ہے تم کو خبر نہیں بھائی

تمھارے ساتھ تمھاری بہن نہیں آئی

جگر کا زخم پھپھی کو دکھانا مشکل ہے

تمھاری زوجہ کو زینب س سنبھالتی بھیا

عجیب وقت ہے ماں کو بتائیں گے اعدا

جو باپ کے لیے ماں کو بتانا مشکل ہے

یوں زرد چہرہ ہے جیسے کہ جاں نکلتی ہے

میں دیکھتا ہوں کمر تیری جھکتی جاتی ہے

ترے لیے یہ شہادت بھلانا مشکل ہے

صدائیں آتی تھیں اکبر یہ حُر کے لاشے سے

اکیلے لاشہءِ اکبر ع اٹھاؤ گے کیسے

کہا تھا آپ نے میت اٹھانا مشکل ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.